بیس روپے کا گھی۔۔۔۔ہدایت افروز تحریر

Ghee of Rs 20

بیس روپے کا گھی…
فوڈ ڈیپارٹمنٹ کا انسپکٹر ایک چھوٹی گروسری اسٹور کا معائنہ کرنے گیا اور اسے گھی کا ایک کھلا ڈبہ ملا۔۔۔ انسپکٹر بولی اگر دوبارہ ایسا ہوا تو میں سخت کارروائی کروں گی،۔دکاندار نے لیڈی انسپکٹر سے کہا ۔۔۔۔محترمہ آپ یہاں تھوڑی دیر بیٹھیں ۔۔۔اسکا جواب ‏آپ کو یہیں بیٹھے بٹھاے مل جاے گا۔۔ لیڈی انسپکٹر تجسس سے وہیں بیٹھ گئی۔ دیکھتے ہیں کیا وجہ ہو سکتی ہے… وہ کچھ دیر بیٹھی تھی کہ ایک بوڑھی عورت ایک چھوٹا سا کپ ہاتھ میں لیے دکان میں آئی اور دکاندار سے کہنے لگی…، مجھے بیس روپے کے برابر ۔ دالیں اور گھی دے دیں۔ بعد ازاں ایک بوڑھا شخص بغیر قمیض کے لباس میں دکان میں آیا اور کہنے لگا کہ جناب مجھے تیس روپے کی چینی اور،بیس روپے میں گھی اورپچاس روپے میں آٹا دے دیں۔ دکاندار نے دوبارہ لیڈی انسپکٹر کی طرف جان بوجھ کر دیکھا، اور اسے سامان دے دیا۔ جب وہ آدمی چلا گیا تو اس نے فوڈ انسپکٹر سے کہا کہ اگر ہم نے کھلی گھی نہ دی تو معاشرے کا یہ طبقہ بھوکا مر جائے گا، ہمیں کھلی مارجرین، گھی، چینی وغیرہ بیچ کر نقصان اٹھانا پڑے گا، اس لیے سارا دن نمک کی کانوں میں کام کرتے ہیں، اور شام کو پانچ سو روپے ملتے ہیں، جو ان کا روزانہ کا خرچہ ہے، کبھی کبھی وہ ان چھوٹے بچوں کو دس گھی خریدتے ہیں، پیسے بھیجتے ہیں اور ہم بھی دیتے ہیں، اگر ہم دس کے لیے گھی نہیں دیتے۔ روپے، یہ نہیں بنے گا، اس گھر میں کھانا پکانا… معصوم بچے بھوکے سو جائیں گے… ہمیں معلوم ہے کہ اگر ہم چینی 20 روپے نہ دیتے تو اس گھر میں چائے نہیں بنتی۔
دوستو… یہ کہانی بوڑھی مریم سے زیادہ دور کی نہیں ہے… اور میرا ایک دوست دکاندار سے کہہ رہا تھا… کہ اس نے یہ سب کچھ فوڈ ڈیپارٹمنٹ کے انسپکٹر کو عملی طور پر دکھایا کہ کوئی جبر کا نتیجہ ہو گا، غریبوں کی عزت نفس کو برقرار رکھنے والے دکانداروں کو سلام کرنا پسند کرتے ہیں۔ گھی بھی دس روپے میں ملتا ہے، کسی نہ کسی طرح مفت میں دیا جاتا ہے….. آج بیس تیس روپے کا کدو بھی نہیں ملتا….. خدا ترس دکاندار خدا کو راضی کرنے کے لیے بیس روپے دیتے ہیں… ان گروسروں کی تقلید کریں ..جب بھی کوئی سامان خریدنے کے لیے نامعلوم رقم لے کر آتا ہے..اسے اپنی عزت نفس کو برقرار رکھتے ہوئے سودا کرنا پڑتا ہے..آپ کو اس سے زیادہ قیمت ادا کرنی پڑتی ہے۔ اس طرح اللہ تعالیٰ ہمارے رزق میں برکت عطا فرمائے۔شاید یہ اعمال قیامت کے دن ہمارے لیے باعث مغفرت ہوں۔
(وہ جا چکا ہے)

اگر آپ کو اس مضمون میں تحریری غلطی نظر آتی ہے تو براہ کرم نیچے کمنٹ کریں۔

بیس روپے کا گھی۔۔۔۔ہدایت افروز تحریر
0 0 votes
Article Rating
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
PHP Code Snippets Powered By : XYZScripts.com